امام حسین رضی اللہ عنہ

منقبت در شان امام حسین رضی اللہ عنہ نواسۂ رسول ﷺ کو کوفیوں نے مہمان بلایا اور کربلا کی سرزمین پر تین دن بھوکے پیاسے امام حسین رضی اللہ عنہ اور آپ کے جانثا روں کو شہید کردیا۔

باغِ جنت کے ہیں بہر مدح خوان اہل بیت

تم کو مژدہ نار کا اے دشمنان اہل بیت

کس زباں سے ہو بیاں عز و شانِ اہل بیت

مدح گوئے مصطفےٰ ہیں مدح خوانِ اہل بیت

ان کی پاکی کا خدائے پاک کرتا ہے بیاں

آیۂ تطہیر سے ظاہر شانِ اہل بیت

مصطفےٰ عزت بڑھانے کے لئے تعظیم دیں

ہے اقبال تیرا دودمانِ اہل بیت

ان کے گھر بے اجازت جبرئیل آتے نہیں

قدر والے جانتے ہیں قدر شانِ اہل بیت

مصطفےٰ بائع خریدار اس کا ﷲ اشتری

خوب چاندی کر رہا ہے کاروانِ اہل بیت

رزم کا میدان بنا ہے جلوہ گاہ حسن وعشق

کربلا میں ہورہا ہے امتحانِ اہل بیت

پھول زخموں کے کھائے ہیں ہوجائے دوست نے

خون سے سینچا گیا ہے گلستانِ اہل بیت

حوریں کرتی ہیں عُروسان شہادت کا سنگار

خوبرو دولھا بنا ہے ہرجوانِ اہل بیت

ہوگئے تحقیق عید دید آب تیغ سے

اپنے روزے کھولتے ہیں صائمانِ اہل بیت

جمعہ کا دن ہے کتابیں زیست کی طے کرکے آج

کھیلتے ہیں جان شہزاگانِ اہل بیت

اے شبابِ فصل گل یہ چل گئی کیسی ہوا

کٹ رہا ہے لہلہاتا بوستانِ اہل بیت

کس شقی کی ہے حکومت ہے ہائےکیا اندھیر ہے

دن دھاڑے لٹ رہا ہے کاروانِ اہل بیت

خشک ہو جا خاک ہوکر خاک میں مل جا فرات

خاک تجھ پر دیکھ سوکھی زبانِ اہل بیت

خاک پر عباس وعثمان علمبردار ہیں

بیکسی اب کون اٹھائے گا نشانِ اہل بیت

تیری قدرت جانور تک آب سے سیراب ہوں

پیاس کی شدت میں تڑپے بے زبانِ اہل بیت

قافلہ سالار منزل کو چلے ہیں سونپ کر

وارثِ بے وارثاں کو کاروانِ اہل بیت

ماہ محرم اور یوم عاشورہ کی فضیلت پڑھیں

فاطمہ کے لاڈلے کا آخری دیدار ہے

حشر کا ہنگامہ برپا ہے میانِ اہل بیت

وقت رخصت کہہ رہا ہے خاک میں ملتا سہاگ

لو سلام آخری اے بیوگانِ اہل بیت

ابر فوج دشمناں اے فلک یوں ڈوب جائے

فاطمہ کا چاند مہر آسمانِ اہل بیت

کس مزے کی لذتیں ہیں آب تیغِ یار میں

خاک و خوں میں لوٹتے ہیں تشنگانِ اہل بیت

باغِ جنت چھوڑ کر آئے ہیں محوب خدا

اے زہے قسمت تمھاری کشتگانِ اہل بیت

حوریں بے پردہ نکل آئیں سر کھولے ہوئے

آخ کیسا حشر ہے برپا میانِ اہل بیت

کوئی کیوں پوچھے کسی کو کیا غرض اے بیکسی

آج کیسا مرض ہے نیم جانِ اہل بیت

گھر لٹانا جان دینا کوئ تم سے سیکھ جائے

جان عالم ہو فدائے خاندانِ اہل بیت

سر شہیدانِ محبت کے ہیں نیزوں پر بلند

اور اونچی کی خدا نے قدر و شانِ اہل بیت

دولتِ دیدار پائیں پاک جانیں بیچ کر

کربلا میں خوب ہی چمکی دوکانِ اہل بیت

زخم کھانے کو تو آب تیغ پینے کو دیا

خوب دعوت کی بُلا کر دشمنانِ اہل بیت

حضرت علامہ حسن رضا خاں علیہ الرحمہ کا نعتیہ کلام پڑھنے کے لیۓ کلک کریں

اپنا سودا بیچ بازار سُونا کر گئے

کون سی بستی بسائی تاجرانِ اہل بیت

اہل بیت پاک سے گستاخیاں بے باکیاں

لعنت الله عليكم دشمنانِ اہل بیت

بے ادب گستاخ فرقہ کو سنا دے اے حسنٓ

یوں کہا کرتے ہیں سنی داستانِ اہل بیت

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *