کفرفقہی کے اقسام واحکام قسط دوم

کفرفقہی کے اقسام واحکام قسط دوم

تحریر: طارق انور مصباحی کفرفقہی کے اقسام واحکام قسط دوم قسط اول پڑھنے کے لیے کلک کریں

کفرفقہی کے اقسام واحکام قسط دوم

مبسملا وحامدا::ومصلیا ومسلما

کفر فقہی کی دوسری قسم کفر احتمالی ہے۔ اس میں کفر کا احتمال مرجوح ہوتا ہے اور عدم کفر کا احتمال راجح ہوتا ہے۔ ایسے قول پر کفر کا حکم نہیں دیا جاتا ہے،بلکہ ایسا قول کرنے کوحرام و ناجائز،خلاف اولیٰ وغیرہ بتایا جاتا ہے۔ احتمال کفر جس قدر مرجوح وضعیف ہوگا،اسی قدر حکم میں تخفیف ہوگی۔جب کفر ثابت نہ ہو، لیکن گناہ ثابت ہوتو توبہ کا حکم ہوگا۔

کفرفقہی کی قسم دوم: کفر احتمالی

بعض الفاظ میں مختلف معانی کا احتمال ہوتا ہے۔بعض کفریہ معانی ہوتے ہیں اور بعض معانی غیرکفر یہ ہوتے ہیں۔ایسے محتمل اور موہم الفاظ وکلمات میں گر احتمال کفر مرجوح ہو، اورحرمت وعدم جواز کاحکم عائد ہوتوقائل کو توبہ ورجوع کا حکم دیاجاتاہے۔ تجدید ایما ن وتجدید نکاح کا حکم نہیں دیا جاتا۔ محض توبہ کا حکم اس وقت ہے جب قائل نے کفری معنی مراد نہ لیا ہو۔اگر کفری معنی مراد لیا،یا کسی معتبرذریعہ سے کفری معنی ثابت ہو گیا تو پھر کفر فقہی یاکفر کلامی جو بھی ثابت ہوگا، اسی کا حکم نافذ ہوگا۔

کفر کلامی وکفر فقہی پر توبہ،تجدید ایمان وتجدید نکاح کا حکم

کفر کلامی کوکفر اتفاقی کہا جاتا ہے،کیوں کہ اس میں کسی کا اختلاف نہیں ہوتا،یعنی ایسا شخص متکلمین اور فقہا دونوں کے اصول کے مطابق بھی کافر قرارپاتا ہے۔

اگر کوئی متکلم وفقیہ تمام ضروری حقائق سے واقف وآشنا ہوکر اور تمام لازمی امور کے ثبوت شرعی کے تحقق کے بعد بھی کافر کلامی کو مومن مانتا ہے تو اس پر حکم کفر عائد ہوگا۔

کفر فقہی میں متکلمین کا لفظی اختلاف ہوتا ہے۔وہ کافر فقہی کوگمراہ وبدعتی کہتے ہیں۔
یہ محض تعبیری اور اصطلاحی اختلاف ہے۔ موجودہ قسطوں میں کفر فقہی کی تفصیل مرقوم ہے۔چوں کہ کفرفقہی کی متعددصورتیں ہیں۔ کون سے کافر فقہی کے لیے متکلمین کا کیا حکم ہے، اس کی تفصیل موجودہ قسطوں میں مرقوم ہے۔کفر کلامی وکفر فقہی دونوں میں توبہ،تجدید ایمان اور تجدید نکاح کا حکم ہے۔

کفر احتمالی میں صرف توبہ واستغفارکا حکم ہے۔ اسی طرح غلطی سے کفریہ کلام زبان سے نکل جائے،تب بھی صرف توبہ واستغفار کا حکم ہے۔

(1)قال الحصکفی:(فی شرح الوھبانیۃ للشرنبلالی:مَا یَکُونُ کُفرًا اِتِّفَاقاً،یبطل العَمَلَ وَالنِّکَاحَ وَاَولَادُہٗ اَولَادُ زِنَا-وما فیہ خلافٌ،یُومَرُ بالاستغفاروالتوبۃ وتجدیدِ النکاح) (الدرالمختار:جلدچہارم:ص432)

(2)قال فی الفتاوی الہندیۃ:(ما کان فی کونہ کُفرًا اِختِلَافٌ-فان قائلہ یومربتجدید النکاح وبالتوبۃ و الرجوع عن ذلک بطریق الاحتیاط)
(فتا وٰی عالمگیری:جلددوم:ص283)

(3)قال الشیخ محمد بن سلیمان اَ فندی:(وَمَا کَانَ فی کونہ کفرًا اِختِلَافٌ،یومر قائلہ بتجدید النکاح وبالتوبۃ والرجوع عن ذلک احتیاطًا)
(مجمع الانہر شرح ملتقی الابحر: ص688)

توضیح:کفریہ کلمات کی چار صورتوں کے احکام مندرجہ ذیل ہیں۔

(1)کفر کلامی کوکفر اتفاقی کہا جاتا ہے۔ اس میں متکلمین وفقہا میں سے کسی کا اختلاف نہیں ہوتا۔کفر اتفاقی میں نکاح باطل ہوجاتا ہے۔اس میں توبہ،تجدید ایمان وتجدید نکاح کا حکم دیا جاتا ہے۔اگر بیوی اس کے ساتھ نہ رہنا چاہے تو اسے اختیار ہے۔کفر کلامی میں اعمال سابقہ بھی تباہ ہوجاتے ہیں۔ان شاء اللہ تعالیٰ اس کے مفصل احکام مرقوم ہوں گے۔

(2)کفر فقہی کوکفر اختلافی کہا جاتا ہے۔ اس میں متکلمین کا اختلاف ہوتا ہے۔وہ کفر فقہی قطعی کو ضلالت کہتے ہیں،اور کفر فقہی ظنی اگر تمام فقہا کے یہاں اجماعی ہوتو اس کوبھی ضلالت وبدعت کہتے ہیں۔ کفر فقہی میں توبہ،تجدید ایمان وتجدید نکاح کا حکم دیا جاتا ہے۔

(3)اگر غلطی سے کفریہ کلام زبان سے نکل جائے تو کفر کاحکم عائد نہیں ہوتا۔ صرف توبہ واستغفار کا حکم ہوتاہے۔

(4)کفر احتمالی میں بھی صرف توبہ واستفا رکا حکم دیا جاتا ہے۔

غلطی سے کفریہ الفاظ زبان سے نکلنے پر توبہ کا حکم

غلطی سے کفریہ الفاظ زبان سے صادرہوجائیں تو قائل پر کفرکا حکم عائد نہیں ہوتا۔ صرف توبہ،استغفار اوررجوع کا حکم دیا جاتاہے۔مندرجہ ذیل عبارتوں میں تفصیل ہے۔

(1) قال الشامی:(قولہ(وَاَولَادُہ اَولَادُ زِنَا)کذا فی فصول العمادی -لکن ذکر فی”نور العین“-وَیُجَدَّدُ بَینَہُمَا النِّکَاحُ اِن رَضِیَت زَوجَتُہ بالعود الیہ وَ اِلَّا فَلَا تُجبَرُ-والمولود بینہما قبل تجدید النکاح بالوطیء بعد الردۃ، یثبت نسبُہ منہ-لکن یکون زنا-الخ-قلتُ:وَلَعَلَّ ثبوتَ النَّسَبِ لِشُبہَۃِ الخِلَافِ-فَاِنَّہَا عند الشافعی-لَا تَبِینُ مِنہُ-تأمل۔
قولہ(والتوبۃ)ای تجدید الاسلام-قولہ (وتجدید النکاح)اَی اِحتِیَاطًا کَمَا فی الفصول العمادیۃ۔

وَزَادَ فِیہَا قِسمًا ثَالِثًا-فَقَالَ:وما کان خطأ من الالفاظ ولایوجب الکفر فقائلہ یقرّ علٰی حَالِہ ولایومر بتجدید النکاح-ولکن یومر بالاستغفار والرجوع من ذلک)(ردالمحتار جلدچہارم:ص432)

توضیح: (وزاد فیہا قسما ثالثا)سے مراد یہ ہے کہ ”فصول عمادیہ“ میں کفر کی ایک تیسری قسم بیان کی گئی ہے۔ تیسری قسم یہ ہے کہ غلطی سے کفریہ کلام زبان پر جاری ہوجائے تو کفر کا حکم عائد نہیں ہوگا،لیکن توبہ واستغفار اوراس کفریہ کلام سے رجوع کا حکم ہوگا۔

(2)قال اخی یوسف الرومی الحنفی:(وفی الفاظٍ تَکَلَّمَ بِہَا خَطَاءً نَحوَ اِن اَرَادَ اَن یَقُولَ:لَا اِلٰہَ اِلَّا اللّٰہُ فَجَرٰی عَلٰی لِسَانِہ اَنَّ مَعَ اللّٰہِ اِلٰہًا اٰخَرَ-اَو جَرٰی بَدلَ شَکَرتُ”کَفَرتُ“ لَا یَکفُرُ فِیہِ قَطعًا فَضلًا عن لزوم النکاح-لکن یؤمر بالاستغفار والرجوع)(ہدیۃ المہدیین:ص15)

(3)قال الشیخ عبد الرحمن بن محمد بن سلیمان اَفَندِی:(لکن فی الدرر:وَاِن لَم یَعتَقِد اَولَم یَعلَم اَنَّہَا لَفظَۃُ الکُفرِ وَلٰکِن اَتٰی بِہَا عَن اِختِیَارٍ -فَقَد کَفَرَ عند عامۃ العلماء ولا یعذر بالجہل-وَاِن لَم یقصد فی ذلک بِاَن اَرَادَ اَن یَتَلَفَّظَ بِلَفظٍ اٰخَرَ فَجَرٰی عَلٰی لِسَانِہ لَفظُ الکُفرِ فَلَا یَکفُرُ)
(مجمع الانہر شرح ملتقی الابحر: ص688)

(4)قال الشیخ عبد الرحمن بن محمد بن سلیمان اَفَندِی:(وَمَا کَانَ خَطَاءً من الالفاظ لَا یُوجِبُ الکُفرَ فَقَاءِلُہ مُومِنٌ عَلٰی حَالِہ لایومر بتجدید النکاح-ولکن یومربالاستغفار والرجوع عن ذلک)
(مجمع الانہر شرح ملتقی الابحر: ص688)

توضیح:منقولہ بالاعبارات میں بتایا گیا کہ غلطی سے کفریہ کلام زبان سے نکل جائے تو کفر کا حکم نہیں ہوگا۔جب کفرکا حکم نہیں تو تجدید ایمان اورتجدید نکاح کا حکم نہیں۔صرف توبہ کا حکم دیا جائے گا اور اس کفریہ کلام سے رجوع کا حکم دیا جائے گا۔

کفر احتمالی میں توبہ کا حکم

مذکورہ بالا تیسری قسم ہی کی طرح ایک قسم کفر احتمالی ہے۔ اس میں کفر کااحتمال ضعیف ومرجوح ہوتاہے،لیکن چوں کہ وہاں عدم کفر کا قوی وراجح احتمال ہوتا ہے،لہٰذا وہاں کفر کا حکم نہیں دیا جاتا ہے۔ کبھی حرمت وعدم جواز کا حکم دیا جاتا ہے۔ کبھی خلاف اولیٰ وغیر ہ کا حکم دیا جاتا ہے۔احتمال کفر جس قدر کمزور ہوتا ہے،اسی قدر حکم میں تخفیف ہوتی ہے۔

(1)قال الحصکفی:(لا یفتی بتکفیر مسلم کان فی کفرہ خلاف ولو روایۃ ضعیفۃ-ثم ہوکبیرۃ لوعامدا مختارا عالما بالحرمۃ-لا جاہلا او مکرہا او ناسیا فتلزمہ التوبۃ)(الدرالمختار:جلد اول:ص321-المکتبۃ الشاملہ)

توضیح:کوئی ایسا احتمالی کفر ہے جس کے کفر ہونے میں فقہا کے درمیان ہے توایسا احتمالی کفریہ کلام کہنا حرام وناجائز ہے۔اگر کسی کوایسے مختلف فیہ کفریہ کلام کی حرمت کا علم ہے، اس کے باوجودوہ اپنے قصد واختیار کے ساتھ اس کفریہ کلام کوکہا تو یہ گناہ کبیرہ ہے،اوراسے توبہ کا حکم دیا جائے گا۔اگر لاعلمی کی حالت یا جبرواکراہ کی حالت میں یا بھول کر ایسا کلام کہا تو توبہ کا حکم نہیں۔

کفر احتمالی کی ایک قسم یہ ہے کہ کلام میں کفرکا احتمال مرجوح ہو،اورایسا کلام کہنا ناجائز وگناہ ہوتو اس کے قائل پر حکم کفرعائد نہیں ہوگا۔ قائل کو صرف توبہ کاحکم دیا جائے گا۔ تجدید ایمان وتجدیدنکاح کاحکم نہیں۔

اگر احتمال کفر ایسا سخت مرجوح وشدید ضعیف ہوکہ حرمت وعدم جواز کاحکم نہ ہو، گناہ بھی نہ ہوتو یہاں توبہ کا حکم نہیں،لیکن اس سے احتراز کا حکم دیا جائے گا۔ اس سے متعلق فتاویٰ رضویہ کے چند سوالات وجوابات مندرجہ ذیل ہیں۔

۔(1)سوال:۔
زید نے ایک تصنیف کی ہے،جس کے شروع میں عربی عبارت اس طرح لکھا ہے:۔

”بسم اللّٰہ الرحمٰن الرحیم:الٰہنا محمد وہومعبود جل شانہ وعز برہانہ ورسولنا محمد وہومحمود صلی اللّٰہ علیہ وسلم“:۔
ان الفاظ کی کوئی تاویل ہو سکتی ہے،یا نہیں۔اگر نہیں توایسے لکھنے والے پر شرعا کیا حکم ہے؟ اوراس سے میل جول رکھنا اوراس کے پیچھے نماز پڑھنا اورایسے اعتقاد والے سے نکاح وغیرہ پڑھوانا شرعاً کیساہے؟بینوا توجروا۔جواب مع عبارات تحریر فرمائیں۔

جواب:ہمارے ائمہ کرام نے حکم دیا ہے کہ اگر کسی کلام میں ننانوے احتمال کفر کے ہوں اور ایک اسلام کا تو واجب ہے کہ اسلام پر محمول کیا جائے،جب تک اس کا خلاف ثابت نہ ہو۔پہلے جملہ میں محمد بفتح میم کیوں پڑھا جائے؟محمدبکسر میم کہا جائے

یعنی حضور سید عالم صلی اللہ تعاعلیہ وسلم محمد ہیں: صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم، بار بار بکثرت حمد وثنا کیے گئے اور ان کا رب عزوجل ان کا محمد ہے،باربار بکثرت ان کی مدح وتعریف فرمانے والا۔یہ معنی صحیح ہوگئے اورلفظ بالکل کفر سے نکل گیااور اگر بفتح میم ہی پڑھیں اورلغوی معنی مراد لیں،یعنی ہمارا رب عزوجل باربار بکثرت حمد کیا گیا ہے۔جب بھی عند اللہ کفر نہ ہوگا،مگر اب صرف نیت کافرق ہوگا۔بہر حال ناجائز ہونے میں شبہہ نہیں۔

ردالمحتار میں ہے:”مجرد ایہام المعنی المحال کاف فی المنع“۔مصنف کو توبہ چاہئے، اوراسے متنبہ کیا جائے۔اس سے زیادہ کی ضرورت نہیں،مگر یہ کہ کوئی حالت خاصہ داعی ہو: واللہ تعالیٰ اعلم (فتاویٰ رضویہ جلد ششم: ص115-114-رضا اکیڈمی ممبئ)

۔(2)سوال: کیا فرماتے ہیں علمائے دین اس مسئلہ میں کہ:۔
ہمارے سرور عالم کا رتبہ کوئی جانے خدا سے ملنا چاہے تومحمد کوخدا جانے
یہ شعر عام طورپر حضور سرور عالم صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم کی محفل میلاد شریف میں پڑھنا درست ہے یانہیں؟

الجواب: اس شعر کا ظاہر صریح کفر ہے،اور اس کا پڑھنا حرام ہے،اور جو اس کے ظاہر مضمون کا معتقد ہو،یقینا کافر ہے۔ہاں، اگر بقرینہ مصرعہ اولیٰ یہ تاویل کرے کہ خدا سے ملنا چاہے تویوں سمجھے کہ محمدصلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم کے مرتبہ کو اللہ ہی جانتا ہے تو یہ معنی صحیح ہیں، مگر ایسا موہم لفظ بولنا جائز نہیں۔رد المحتار میں ہے:مجر د ایہام المعنی المحال کاف فی المنع:واللہ تعالیٰ اعلم (فتاویٰ رضویہ: جلدششم: ص 208-رضا اکیڈمی ممبئ)

۔(3)اعلیٰ حضرت امام احمد رضا قادری قدس سرہ العزیز سے سوال ہواکہ اللہ تعالیٰ کو حاضروناظر کہنا کیسا ہے؟آپ نے جواب میں تحریر فرمایا:۔

”اللہ عزوجل شہید وبصیر ہے۔اسے حاضر وناظر نہ کہنا چاہئے،یہاں تک کہ بعض علما نے اس کی تکفیر کا خیال فرمایا اوراکابر کو اس کی نفی کی حاجت ہوئی۔مجموعہ ابن وہبان میں ہے: (ویا حاضر ویا ناظرلیس بکفر) جو ایسا کہتا ہے،خطاکرتا ہے،بچنا چاہئے:واللہ اعلم‘‘۔ (فتاویٰ رضویہ: جلد ششم: ص 157-رضا اکیڈمی ممبئ)

توضیح:در مختارکی عبارت میں ایسے محتمل کلام کا حکم بیان کیا گیا،جس کے کفر ہونے میں فقہاکااختلاف ہو۔ایسا کلام کرنے کو گناہ کبیرہ بتایا گیا اور توبہ کا حکم دیا گیا۔فقہا کے اختلاف کے سبب ایسے محتمل کلام پرگر چہ حکم کفر نہیں،لیکن ایسا کلام کہنا گناہ کبیرہ ہے۔ عہد حاضر میں دیکھا جاتا ہے کہ کسی کلام کی کوئی تاویل مل گئی،بس ملزم کو بری الذمہ قراردے دیا جاتا ہے، حالاں کہ وہاں اگر حرمت وعدم جواز کا حکم نافذہوتا ہے توقائل کوتوبہ کا حکم دینا ہو گا۔

فتاویٰ رضویہ کے منقولہ بالا فتاویٰ میں ایسے محتمل کلام کا حکم بیان کیا گیا ہے جس میں احتمال کفر مر جوح ہو، اور عدم کفرکا احتمال راجح ہو۔پہلے دوفتویٰ میں محتمل کلام پر عدم جواز کا حکم دیا گیا،اورقائل کو توبہ کا حکم دیا گیا،کیوں کہ احتمال کفرگرچہ مرجوح وضعیف تھا،لیکن شدید مرجوح وشدیدضعیف نہیں تھا،لہٰذا ایساکلام کہنا ناجائز وگناہ ہے،اور گناہ سے توبہ کا حکم ہے۔

تیسرے فتویٰ میں صرف احتراز کا حکم ہے۔توبہ کا حکم نہیں، کیوں کہ احتمال کفر شدید مرجوح وشدیدضعیف ہے، پس ایسا کلام حرام وناجائز اورگناہ نہیں۔ جب گناہ نہیں تو توبہ کا حکم نہیں دیا گیا۔بعض امور شرعاًناپسندیدہ ہوتے ہیں،لیکن گناہ نہیں۔ان سے پرہیز کا حکم ہے۔اب ذیل میں ان کلمات کا حکم مرقوم ہے،جس میں کفروعدم کفر کا احتمال مساوی ہو۔

محتمل الفاظ جن میں احتمالات مساوی ہوں

کفر کلامی,کفر متعین کا نام ہے۔اس میں متعدد احتمالات نہیں ہوتے,بلکہ ایک متعین معنی ہوتا ہے۔کفر فقہی قطعی میں احتمال بعید ہوتا ہے۔احتمال بعید کو فقہا قبول نہیں کرتے۔اور حکم کفر جاری کرتے ہیں۔کفر کلامی کی طرح یہ بھی فقہا کے یہاں کفر کفر قطعی التزامی ہے۔

ظنی کلام میں احتمال راجح واحتمال مرجوح ہوتا ہے۔احتمال راجح کو ظنی کہا جاتا ہے,اور احتمال مرجوح کو وہمی۔اسی طرح کوئی کلام محتمل ہوتا ہے۔اس میں متعدد معانی کااحتمال ہوتا ہے۔جیسے مشترک لفظ متعدد معانی کے درمیان مشترک ہوتا ہے۔

جس کلام میں کفری احتمال اورغیر کفری احتمال مساوی ہو،اس کا حکم یہ ہے کہ مفتی اس کوغیر کفری معنی پر محمول کرے۔ اگر قائل کی نیت بھی غیر کفری معنی ہے تو وہ مومن ہے،اوراگر قائل کی نیت کفری معنی ہے تووہ عند اللہ کافر ہے،گرچہ مفتی نے اس کے کفر کا فتویٰ نہیں دیا۔ ایسی صورت میں لازم ہے کہ قائل توبہ وتجدید ایمان وتجدید نکاح کرکے عنداللہ بری الذمہ ہوجائے۔مفتی کے عدم کفر کا فتویٰ اس کے حق میں مفید نہیں۔مفتی کا حکم مندرجہ ذیل ہے۔

۔(1)قال الحصکفی:((و)اعلم انہ(لایفتی بکفر مسلمٍ اَمکَنَ حَملُ کَلَامِہ عَلٰی مَحمَلٍ حَسَنٍ اَو کَانَ فی کفرہ خلاف ولو)کان ذلک(روایۃً ضعیفۃً)کما حررہ فی البحر وعزاہ فی الاشباہ الی الصغرٰی وفی الدرر وغیرہا-اذا کان فی المسئلۃ وجوہٌ توجب الکفر وَوَاحِدٌ یَمنَعُہ-فَعَلَی المُفتِی المیل لِمَا یَمنَعُہ-ثم لَونِیَّتُہ ذلک فَمُسلِمٌ وَاِلَّا لَم یَنفَعہ حَملُ المُفِتی عَلٰی خِلَافِہ)(الدرالمختار: جلد چہارم:ص414)

۔(2)قال الشامی فی توضیح العبارۃ المذکورۃ:(قولہ(ولوروایۃً ضعیفۃً)قال الخیر الرملی:اقول:ولوکانت الروایۃُ لِغَیرِ اَہلِ مَذہَبِنَا-ویدل علٰی ذلک اشتراط کون ما یُوجِب الکُفرَ مُجمَعًا عَلَیہِ-الخ قولہ(کَمَا حَرَّرَہ فی البحر)قَدَّمنَا عِبَارَتَہ قبیل قولہ-وشرائط صحتہا-قولہ(وجوہٌ)ای احتمالاتٌ کَمَا مَرَّ فی عبارۃ البحر عن التتار خانیۃ-اَنَّہ لَا یُکَفَّرُ بِالمُحتَمِلِ) (ردالمحتار:جلدچہارم:ص415-مکتبہ شاملہ)

۔(3)قال فی الفتاوی الہندیۃ:(اذا کان فی المسئلۃ وجوہٌ توجب الکفر ووجہٌ واحدٌ یمنع- فَعَلَی المفتی اَن یَمیل الیٰ ذٰلک الوجہ-کذا فی الخلاصۃ-فی البزازیۃ،الا اذا صَرَّحَ بارادۃٍ تُوجِبُ الکُفرَ فَلَا یَنفَعُہُ التَّاویل حِینَءِذٍ-کذا فی البحرالرائق)  (فتاویٰ عالمگیری:جلد دوم:ص283-البحرالرائق جلد پنجم:ص210)

۔(4)قال الفقیہ الحنفی ابن عابدین الشامی نَاقِلًا عن البحرالرائق:۔
(وفی الخلاصۃ وغیرھا-اذا کان فی المسئلۃ وجوہٌ توجب التکفیر ووجہٌ واحدٌ یمنعہ-فعلی المفتی ان یمیل الی الوجہ الذی یمنع التکفیر تَحسِینًا لِلظَّنِّ بِالمُسلِمِ-زاد فی البزازیۃ-اِلَّا اِذَا صَرَّحَ بِاِرَادَۃِ مُوجِبِ الکُفرِ-فلا ینفعہ التاویل حٍٍ-و فی التتارخانیۃ-لَا یَکفُرُ بِالمُحتَمِلِ-لان الکفرَ نھایۃ فی العقوبۃ فیستدعی نھایۃً فی الجنایۃ-ومع الاحتمال لا نھایۃ)(ردالمحتار: جلدچہارم:ص 408-البحرالرائق: جلدپنجم:ص210)

۔(5)قال الملاعلی القاری:(قَد ذَ کَرُوا اَنَّ المسئلۃ المتعلقۃ بالکفر اِذَا کَانَ لَھَا تِسعٌ وَتِسعُونَ اِحتِمَالًا لِلکُفرِ واحتمالٌ واحدٌ فی نفیہ-فَالاَولٰی لِلمُفتِی والقاضی ان یعمل بالاحتمال النافی)(شرح الفقہ الاکبر: ص199)

توضیح:منقولہ بالا عبارتوں میں بتایا گیا کہ محتمل الفاظ میں مفتی عدم تکفیر کی طرف مائل ہو،جب کفروعدم کفر کا احتمال مساوی درجے کا ہو۔اگرقائل صراحت کردے کہ ہماری مراد کفری معنی ہے تو مفتی نے جس احتمال کے سبب عدم کفر کافتویٰ دیا ہے،وہ فتویٰ قائل کے حق میں مفید نہیں ہوگا۔اس پرلازم ہے کہ خود توبہ وتجدیدایمان وتجدید نکاح کرلے۔

محتمل الفاظ میں قائل سے سوال کا حکم

جب مفتی سے کسی محتمل لفظ کے بارے میں سوال ہو، جس میں کفر وعدم کفر دونوں کا احتمال مساوی ہوتو فتویٰ دینے سے قبل قائل کی مراد دریافت کرلے۔قائل جواپنی مراد بتائے، اسی کے اعتبارسے مفتی شرعی حکم بیان فرمائے۔

اگر قائل کی مراد معلوم نہ ہو سکے تو اپنی جانب سے عدم کفر کا حکم دے۔جس کا ذکر ماقبل کی بحث میں گزرا۔

۔ (1)قال الہیتمی:(ومنہا مَا صَرَّحَ بِہٖ اَءِمَّتُنَا کالرافعی فی”العزیز“ والنووی فی”الروضۃ والمجموع“ وغیرہما-مِن اَنَّ المُفتِیَ اذا سُءِلَ عَن لَفظٍ یَحتَمِلُ الکُفرَ وَغَیرَہٗ-لَا یَقُول ہو مہدر الدم اومباحہ اویقتل او نحو ذلک-بل یقول:یُسءَلُ عَن مُرَادِہٖ-فَاِن فَسَّرَہٗ بِشَیءٍ،عُمِلَ بِہٖ) (الفتاوی الحدیثیہ:ص38-دارالفکربیروت)

۔(2)قال الہیتمی:(سُءِلَ نَفَعَ اللّٰہُ بِہٖ-بِمَا لَفظُہٗ:۔
مَن قَالَ اِنَّ المؤمن یعلم الغیب-ہل یکفر لقولہ تعالٰی(قُل لَا یَعلَمُ مَن فِی السَّمٰوَاتِ وَالاَرضِ الغَیبَ اِلَّا اللّٰہُ)وقولہ(عَالِمُ الغَیبِ فَلَایُظہِرَ عَلٰی غَیبِہٖ اَحَدًا)-اَو یُستَفصَلُ لِجَوَازِ العِلمِ بِجُزءِیَّاتٍ مِنَ الغَیبِ۔

فَاَجَابَ بِقَولہ رحمہ اللّٰہُ وَنَفَعَنَا بِہٖ-آمین:۔
لَا یُطلَقُ القول بکفرہ- لِاِحتِمَالِ کَلَامِہٖ-وَمَن تَکَلَّمَ بِمَا یَحتَمِلُ الکُفرَ وَغَیرَہٗ-وَجَبَ اِستِفصَالُہٗ کما فی الروضۃ وغیرہا۔

ثم قال الرافعی:ینبغی اذا نُقِلَ عَن اَحَدٍ لَفظٌ ظَاہِرُہُ الکُفرُ،اَن یُتَاَمَّلَ وَیُمعَنَ النَّظرُ فیہ-فَاِن اِحتَمَلَ مَا یُخرِجُ اللَّفظُ عَن ظاہرہ-مِن اِرَادَۃِ تَخصِیصٍ اَومَجَازٍ اَو نَحوِہِمَا-سُءِلَ اللَّافِظُ عَن مُرَادِہ-وَاِن کَانَ الاَصلُ فِی الکَلَامِ الحَقِیقَۃُ وَالعُمُومُ وَعَدَمُ الاِضمَارِ-لِاَنَّ الضَّرُورَۃَ مَاسَّۃٌ اِلَی الاِحتِیَاطِ فِی ہٰذَا الاَمرِ-وَاللَّفظُ مُحتَمِلٌ-فَاِن ذَکَرَمَا ینفی عنہ الکفر مما یَحتَمِلُہُ اللَّفظُ،تُرِکَ-وَاِن لَم یَحتَمِلُ اللَّفظُ خِلَافَ ظَاہِرِہٖ-اَوذَکَرَغَیرَمَا یَحتَمِلُ -اَولَم یَذکُر شَیءًا اُستُتِیبَ-فَاِن تَابَ قُبِلَت تَوبَتُہٗ-وَاِلَّا فَاِن کَانَ مَدلُولُ لَفظِہٖ کُفرًا مُجمَعًا عَلَیہِ -حُکِمَ بِرِدَّتِہٖ فَیُقتَلُ اِن لَم یَتُب۔
وان کان فی محل الخلاف-نَظَرَ فی الراجح من الادلۃ اِن تَاَہَّلَ- وَاِلَّا اَخَذَ بالراجح عند اکثر المحققین من اہل النظر-فَاِن تَعَادَلَ الخِلَافُ -اَخَذَ بِالاَحوَطِ-وہوعدم التکفیر-بل الذی امیل الیہ اذا اُختُلِفَ فِی التَّکفِیرِ،وَقفُ حَالِہٖ وَتَرکُ الامر فیہ الی اللّٰہ تَعَالٰی-انتہٰی کلامہ
وقولہ:وان کان فی محل الخلاف الخ محلہ فی غیر قاض مقلد رُفِعَ الیہ امرہ-وَاِلَّا لَزِمَہُ الحُکمُ بِمَا یَقتَضِیہِ مَذہَبُہٗ ان انحصر فیہ-سواء وافق الاحتیاطَ اَم لَا۔
وَمَا اَشَارَ اِلَیہِ الرَّافِعِیُّ مِنَ الاِحتِیَاطِ فی اراقۃ الدماء ما امکن، وَجِیہٌ- فقد قال حجۃ الاسلام الغزالی-تَرکُ قتل الف نفس استحقوا القتلَ، اَہوَنُ من سفک محجم من دم مسلم بغیر حق-ومتٰی اُستُفصِلَ فَقَالَ: اَرَدتُ بقولی-”المؤمن یعلم الغیب“-اَنَّ بَعضَ الاَولِیَاءِ قَد یُعَلِّمُہُ اللّٰہُ بِبَعضِ المُغِیبَاتِ-قُبِلَ مِنہُ ذٰلِکَ-لانہ جائزٌ عَقلًا وَوَاقِعٌ نَقلًا-اذ ہو من جملۃ الکرامات الخارجۃ عن الحصر علٰی ممر الاعصار-فبعضہم یعلمہ بخطاب-و بعضہم یعلمہ بکشف حجاب-وبعضہم یکشف لہ عن اللوح المحفوظ حَتّٰی یَرَاہُ)(الفتاوی الحدیثیہ: ص222-مکتبہ شاملہ)

توضیح:کبھی ایک کلام میں متعدد معانی کا احتمال ہوتا ہے۔بعض معانی کفریہ ہوتے ہیں۔بعض غیرکفریہ۔

جب کلام متعدد معانی کا احتمال رکھے۔بعض معانی کفریہ ہوں،اوربعض معانی غیر کفریہ۔احتمالات مساوی ہون۔راجح ومرجوح نہ ہوں۔ایسی صورت میں حکم کی بنیاد قائل کی نیت پر ہوتی ہے،لہٰذا فتویٰ سے قبل قائل کی مراد دریافت کی جائے گی۔کلام میں متعدد احتمال ہونے کی چند مثالیں مندرجہ ذیل ہیں۔

۔(1)قال الھیتمی:(وما ذکرہ فی-اَنصِفِ اللّٰہَ یُنصِفُکَ یَومَ القِیَامَۃِ- من انہ کفرٌ-فیہ نظرٌ ظاھرٌ-لانہ ان اراد بہ-ان اطعتہ اَثَابَکَ فَوَاضحٌ انہ غیرکفر-وان اراد حقیقۃَ الانصاف المشعرۃ بالاحتیاج اِتَّجَہَ الکُفرُ-لان من اعتقد ان اللّٰہَ یَحتَاجُ الٰی اَحَدٍ من خلقہ فَلَا شَکَّ فی کفرہ-وَاِن اَطلَقَ -تَرَدَّدَ النظر فیہ-والظاھرانہ غیرکفر لان الانصاف لایستلزم ذلک)
(الاعلام بقواطع الاسلام:ص367)

۔(2)قال الھیتمی:(وَقَد ذَ کَرَالنووی عَفَا اللّٰہُ عَنہُ فی شرح المھذب -انہ یقال:قَصَدَ اللّٰہُ کَذَا-بِمَعنٰی اَرَاد َ-فَمَن قَالَ:لَیسَ لَہ نِیَّۃٌ اَی قَصدٌ-فَاِن اَرَادَ اَنَّہ لَیسَ لَہ قَصدٌ کَقَصدِنَا فَوَاضِحٌ-وکذا اِن اَطلَقَ-اَو اَرَادَ اَنَّہٗ لَا اِرَادَۃَ لَہٗ اَصلاً-فَاِن اَرَادَ المَعنَی الَّذِی یَقُولُہُ المُعتَزِلَۃِ فَلَا کُفرَاَیضًا-اَو اَرَادَ سَلبَھَا مُطلَقًا،لَابالمعنی الذی یقولنہ فھوکُفرٌ) (الاعلام بقواطع الاسلام: ص367)

توضح:جب رب تعالیٰ سے من کل الوجوہ ارادہ کا سلب کردے تویہ جبر مطلق ہے۔یہ فلاسفہ کا عقیدہ ہے۔فلاسفہ کہتے ہیں کہ اللہ تعالیٰ فاعل بالایجاب ہے،یعنی فاعل مختار نہیں کہ اپنی مرضی سے جوچاہے،کرے۔یہ عقیدہ کفر یہ ہے۔فلسفہ کی کتابوں میں فن الٰہیات میں اس کا تفصیلی ذکر موجود ہوتا ہے۔

۔(3)قال الامام فخرالد ین حسن بن منصورالاوزجندی المعروف بقاضی خاں:(رجل قال لغیرہ”صَلِّ المَکتُوبَۃَ“ فقال:”لا اصلیہا الیوم“- اختلفوا فیہ-ذکر الناطفی عن محمد رحمہما اللّٰہ تَعَالٰی انہ قال:قول الرجل:”لااصلی“ یحتمل وجوہًا اربعۃ۔

احدہا:لا اصلی،فقد صلیتہا-والثانی:لا اصلی بقولک،فَقَد اَمَرَنِی مَن ہُوَ خَیرٌ مِنکَ-والثالث: لا اصلی فسقا ومجانۃ-ففی ہذہ الوجوہ الثلث لا یکفر-والرابع:لا اصلی-فلیس تجب عَلَیَّ الصَّلٰوۃُ وَلَم اُومَر بِہَا یعنی جحودہا،یصیرکافرًا-قال الناطفی رحمہ اللّٰہ تعالٰی:فعلٰی ہذا اذا اطلق،وقال:”لا اصلی“لا یکفر،لان ہذا اللفظ محتمل)
(فتاوٰی قاضی خاں: جلدسوم:ص573-داراحیاء التراث العربی بیروت)

توضیح:منقولہ بالاعبارتوں میں بیان کیا گیا کہ بعض الفاظ وکلمات میں تین،چار معانی کا احتمال ہوتا ہے۔ ایسے محتمل الفاظ میں مفتی کو کامل تحقیق کے بعد ہی حکم نافذکرنا ہے

ضروریات دین کی دوقسمیں ہیں۔ضروریات دین کی قسم اول کو ضروریات دین کہا جاتا ہے۔ضروریات دین کی قسم دوم کوضروریات اہل سنت کہا جاتا ہے۔ضروریات دین قسم اول کے انکار کی چار صورتیں ہیں۔ان چاروں صورتوں کا تفصیلی بیان مرقوم ہوچکا۔اجمالی تذکرہ مندرجہ ذیل ہے۔

۔(1)ضروریات دین کا مفسر انکار:اس کو کفرکلامی اور کفر متعین کہا جاتا ہے۔

۔(2)ضروریات دین کا بطورنص وظاہر انکار:اس کو کفر فقہی قطعی اور کفر متبین کہا جاتا ہے۔متکلمین اس کفر کوضلالت وگمرہی کہتے ہیں۔یہ تعبیری اوراصطلاحی اختلاف ہے۔

۔(۳)ضروریات دین کا ظنی انکار:اس کوکفر فقہی ظنی کہا جاتا ہے۔

۔(۴)ضروریات دین کا مرجوح انکار:اس کوکفر احتمالی کہا جاتا ہے۔اس صورت میں حکم کفر نہیں دیا جاتا۔

ضروریات اہل سنت کا انکار

ضروریات اہل سنت کا انکار فقہائے احناف اوران کے مؤیدین کے یہاں کفرفقہی ہے۔ متکلمین اس انکار کو ضلالت وگمرہی کہتے ہیں۔تفصیل مندرجہ ذیل ہے۔

ضروریات اہل سنت کے انکار پرکفر فقہی کا حکم عائد ہونے کی دوشرطیں ہیں:

۔(۱)منکر کو اس کے قطعی ہونے کا علم ہو۔(۲)تاویل فاسد کے سبب انکار کیا ہو۔

دیگر صورتیں مندرجہ ذیل ہیں۔

۔(۱)اگر لاعلمی کی حالت میں ضروریات اہل سنت کا انکار کیا تونہ فقہائے احناف کے یہاں کفر فقہی کا حکم ہے،نہ ہی متکلمین کے یہاں ضلالت وگمرہی کا حکم ہے۔

۔(۲)اگر منکر کواس کے قطعی ہونے اورضروریات اہل سنت میں سے ہونے کا علم ہے، اس صورت میں بلا تاویل انکارکرے تو یہ استخفاف بالدین او رکفر عنادی ہے۔اس صورت میں فقہا ومتکلمین دونوں کے یہاں منکر پر کفر کا حکم عائد ہوگا۔ یہ کفر کلامی ہے۔

ضروریات اہل سنت کے انکارکی صور تیں

ضروریات اہل سنت کا انکار،خواہ نص کے طریقے پر ہو،یا بطور مفسرہو، یعنی انکار صریح متبین ہو، یا صریح متعین ہو۔دونوں کاحکم ایک ہے۔ ضروریات اہل سنت کا انکار متکلمین کے یہاں گمرہی اور فقہائے احناف اوراس کے مؤیدین کے یہاں کفر فقہی ہے۔

انکار صریح کی دونوں قسموں میں اجتہاد جاری نہیں ہوگا۔انکار مفسر،یعنی انکار صریح متعین قطعی بالمعنی الاخص انکار ہوتاہے۔قطعی بالمعنی الاخص میں اجتہاد کی اجازت نہیں۔ایسا نہیں کہ بعض کے یہاں انکار ثابت ہو اور بعض کے یہاں انکار ثابت نہ ہو۔

انکار بطریق نص یعنی انکار صریح متبین,قطعی بالمعنی الاعم انکار ہوتاہے۔قطعی بالمعنی الاعم میں بھی اجتہاد کی اجازت نہیں۔ فقہا ومتکلمین دونوں کے یہاں انکار ثابت ہو گا اور انکار میں احتمال بعید ہو گا۔احتمال بعید فقہا کے یہاں معتبر نہیں۔

ضروریات اہل سنت کا لزومی انکار ہوتووہاں اجتہاد ہوگا۔بعض کے یہاں انکارلزومی ثابت ہوگا،بعض کے یہاں ثابت نہیں ہوگا۔اسی اعتبارسے منکر کے حکم میں بھی اختلاف ہو گا۔یہاں لزوم بین کی صورت میں متکلمین کے یہاں حکم ضلالت ثابت ہوگا۔

حضرات خلفائے راشدین رضی اللہ تعالیٰ عنہم کی خلافت راشدہ کی حقانیت ضروریا ت اہل سنت میں سے ہے۔ضروریات دین میں سے نہیں۔(مطلع القمرین:ص 78)

کوئی کہے کہ حضرت علی مرتضیٰ رضی اللہ تعالیٰ عنہ خلیفہ بلا فصل ہیں تو اس نے صریح لفظوں میں حضرات خلفائے ثلاثہ رضی اللہ تعالیٰ عنہم کی خلافت کا انکار نہ کیا،لیکن خلیفہ چہارم خلیفہ بلا فصل اسی وقت ہوں گے جب ماقبل کے تینوں خلفائے راشدین رضی اللہ تعالیٰ عنہم کی خلافت کوکالعدم قرار دیا جائے۔اس کے علاوہ کوئی راہ نہیں۔

خلیفہ چہارم کوخلیفہ بلافصل ماننے سے ماقبل کے تینوں خلفائے راشدین رضی اللہ عنہم اجمعین کی خلافت کا کالعدم ہونا لزو م بین کے طورپر ثابت ہے۔ اسی طرح تاویل فاسد کے سبب وہ لوگ خلافت خلفائے ثلاثہ کا صریح انکار بھی کرتے ہیں۔ خلفائے ثلاثہ کی خلافت کے انکار کے سبب ماقبل کے تبرائی شیعہ فقہا کے یہاں کافر اور متکلمین کے یہاں گمراہ ہیں۔

تیرہویں صدی ہجری سے روافض نے کفر کلامی کی راہ اختیارکرلی۔وہ قرآن مجید کو ناقص اورحضرات ائمہ اہل بیت رضی اللہ تعالیٰ عنہم اجمعین کوحضرات انبیائے کرام علیہم الصلوٰۃ والسلام سے افضل بتانے لگے۔یہ دونو ں امر کفر کلامی ہیں۔اسی سبب سے مابعد کے تبرائی روافض پر کفر کلامی کا حکم عائد ہوا۔ روافض میں فرقہ تفضیلیہ پر کفرکاحکم نہیں۔وہ گمراہ وبدعتی ہیں۔

فتاویٰ رضویہ سے ضروریات اہل سنت سے متعلق سوال وجواب مندرجہ ذیل ہے:

سوال:کیا شیعوں کے سب فرقے اورغیر مقلدین سب سے سب کافر ہیں؟

الجواب:ان میں ضروریات دین سے کسی شئ کا جومنکر ہے،یقینا کافر ہے،اور جو قطعیات کے منکر ہیں،ان پر بحکم فقہا لزوم کفر ہے،اور اگر کوئی غیر مقلد ایسا پایا جائے کہ صرف انھیں فرعی اعمال میں مخالف ہو،اورتمام عقائد قطعیہ میں اہل سنت کا موافق،یا وہ شیعی کہ صرف تفضیلی ہے توایسوں پر حکم تکفیر ناممکن ہے:واللہ تعالیٰ اعلم  (فتاویٰ رضویہ: جلد 14 ص281-جامعہ نظامیہ لاہور)

توضیح: منقولہ بالا عبارت میں قطعیات سے ضروریات اہل سنت مرادہیں،جو ضروریات دین کی قسم دوم ہے۔ قسم دوم کے انکارکو کفرفقہی بتایا گیا۔ قسم دوم کا مفسرانکار بھی متکلمین کے یہاں ضلالت وگمرہی ہے۔ کفر کلامی کوکفر التزامی کہا جاتا ہے اورکفر فقہی کوکفر لزومی کہا جاتا ہے،حالاں کہ کفر فقہی میں بھی لزوم والتزام دونوں صورتیں ہوتی ہیں،لیکن کفر فقہی میں تاویل بعید موجود ہوتی ہے،لہٰذا متکلمین کے یہاں التزام کفر میں اس کا شمار نہیں کیا جاتا۔

ضروریات دین کا غیر مفسر انکار ہوتوانکارہی میں تاویل بعید موجود ہوگی۔

اگر ضروریات اہل سنت کا مفسر انکار ہوتو انکار میں تاویل بعید نہیں،لیکن ضروریات اہل سنت قطعی بالمعنی الاعم امور ہیں۔جن دلائل سے ان کا ثبوت ہوتا ہے۔ ان دلائل کے ثبوت یا دلالت میں تاویل بعید ہوتی ہے،مثلاًقرآن مجید کی آیت مقدسہ کسی مفہوم پربطور نص دلالت کرے،بطور مفسر دلالت نہ کرے تو دلالت میں تاویل بعید ہے۔آیت قرآنیہ کے ثبوت میں تاویل بعید نہیں،بلکہ تمام آیات قرآنیہ اور نظم قرآنی کے الفاظ وحروف متواتر لفظی ہیں اوران کا ثبوت قطعی بالمعنی الاخص کے طریقے پر ہے کہ تاویل وشبہہ کی کوئی گنجائش نہیں۔

اگر کوئی حدیث متواتر معنوی ہو،متواتر لفظی نہ ہو،اور کسی مفہوم پر بطور مفسر دلالت کرے تو دلالت قطعی بالمعنی الاخص ہے،لیکن ا س متواتر معنوی حدیث کا ثبوت قطعی بالمعنی الاعم ہے۔ اس کے ثبوت میں احتمال بعید ہے۔

ضروریات دین اورضروریات اہل سنت کی تشریح

ضروریات اہل سنت کا دونام ہے:(۱)قطعی غیرضروری (۲)ضروریات دین کی قسم دوم۔ضروری دینی کی قسم اول اورقسم دوم کا بیان مندرجہ ذیل عبارت میں ہے۔

قال الہیمتی الشافعی ناقلًا عن تقی الدین السبکی الشافعی:۔
(ثم المعلوم بالضرورۃ من الشرع قسمان-احدہما ما یعرفہ الخاصۃ والعامۃ-والثانی ما قد یخفی علٰی بعض العوام-ولا ینافی ہذا- قولنا انہ معلوم بالضرورۃ-لان المراد من مارس الشریعۃ-عَلِمَ مِنہَا ما یحصل بہ العلم الضروری بذلک-وہذا یحصل لبعض الناس دون بعض بحسب الممارسۃ وکثرتہا اوقلتہا اوعدمہا۔

فالقسم الاول من انکرہ من العوام والخواص فَقَد کَفَرَ-لانہ کَالمُکَذِّب لِلنَّبِیِّ صلی اللّٰہ علیہ وسلم فی خبرہ-ومن ہذا القسم انکار وجوب الصلٰوۃ والصوم والزکاۃ والحج ونحوہا وتخصیص رسالتہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم ببعض الانس-فمن قال ذلک-فلا شک فی کفرہ وان اعترف بانہ رسول اللّٰہ-لان عموم رسالتہ الٰی جمیع الانس مما یعلمہ الخواص و العوام بالضرورۃ من الدین۔

والقسم الثانی من انکرہ من العوام الذین لم یحصل عندہم من ممارسۃ الشرع-ما یحصل بہ العلم الضروری،لم یکفر-وان کانت کثرۃ الممارسۃ توجب للعلماء العلم الضروری بہ) (الفتاوی الحدیثیہ: ص144-دار الفکر بیروت)

توضیح:منقولہ بالاعبارت میں ضروریات دین کی دونوں قسم کا بیان ہے۔

ضروریات اہل سنت کے انکار پر کفرفقہی کا حکم

۔(1)قال الہیتمی:(وَلَا یَکفُرُ بانکار قطعی غیر ضروری کاستحقاق بنت الابن السدس مع بنت الصلب-

وظاہر کلام الحنفیۃ کُفرُہٗ-ویجب حملہ اَی بناءً علٰی قواعدہم علٰی مُنکِرٍ عَلِمَ اَنَّہٗ قَطعِیٌّ-وَاِلَّا فَلَا یَکفُرُ-اِلَّا اذا ذکر لہ اہل العلم انہ من الدین وانہ قطعی فتمادی فیما ہو علیہ عنادًا فَیَکفُرُلظہور التکذیب منہ حینئذ کما دل علیہ کلام امام الحرمین) (الفتاوی الحدیثیہ ص141-دار الفکربیروت)

توضیح: (وظاہر کلام الحنفیۃ کفرہ)سے ثابت ہے کہ فقہائے احناف قطعی غیر ضروری (ضروریات اہل سنت)کے انکار پر حکم کفر جاری کرتے ہیں۔

(علم انہ قطعی)سے ثابت ہے کہ منکر کوضروریات اہل سنت کی قطعیت کا علم ہو۔

منقولہ بالا عبارت میں ضروری دینی کی قسم دوم کوقطعی غیر ضروری کہا گیا اور یہ بتایا گیا کہ حنفی فقہا قطعی غیرضروری کے انکار پر بھی کفر کا حکم عائد کرتے ہیں۔

فقہائے احناف کے یہاں ہرقطعی کے انکار پر حکم کفر عائد ہوگا۔خواہ وہ امرقطعی بالمعنی الاخص(ضروریات دین) ہو،یا قطعی بالمعنی الاعم (ضروریات اہل سنت)،جب کہ منکر کو معلوم ہوکہ یہ قطعی ہے۔ضروریات اہل سنت کے انکار پر کفر فقہی کا حکم عائدہوتا ہے۔

امام الحرمین عبد الملک بن ابومحمد جوینی شافعی (۹۱۴؁ھ-۸۷۴؁ھ) کے کلام سے واضح ہے کہ اگرکسی نے ضروریات اہل سنت میں سے کسی امر کا انکار لاعلمی کی حالت میں کیا، پھر اسے بتادیا گیاکہ یہ قطعی ہے،اس کے باوجود محض اپنی ہٹ دھرمی کے سبب انکار کیا تو یہ استخفاف بالدین وکفرعنادی ہے۔اس کے سبب متکلمین کے یہاں بھی کفر کا حکم عائدہو گا۔

اگر عناد وہٹ دھرمی کے سبب انکار نہیں کیا،بلکہ تاویل فاسد کے سبب انکارکیا تو متکلمین کے یہاں ضلالت وگمرہی کاحکم ہے اور فقہائے احناف کے یہاں کفر کا حکم ہے۔

۔(2)قال الامام احمد رضا القادری:(اقول:تحقیق المقام اَنَّ اَکثَرَ الحَنفیۃ یُکَفِّرُونَ بانکارکل مقطوع بہ-کما ہومُصَرَّحٌ فی رد المحتار وغیرہ-وہم ومن وافقہم،ہم القائلون بانکارکل مجمع علیہ-بَعدَ مَا کَانَ الاِجمَاعُ قَطعِیًّا نَقلًا وَدَلَالَۃً-وَلَاحَاجَۃَ اِلٰی وجود النص-وَالمُحَقِّقُونَ لَا یُکَفِّرُونَ اِلَّا بانکارمَا عُلِمَ مِنَ الدِّینِ ضَرُورَۃً بحیث یشترک فی معرفتہ الخاص والعام المخالطون للخواص-فان کان المجمع عَلَیہِ ہکذا-کَفَرَ مُنکِرُہ-وَاِلَّا،لَا-وَلَا حَاجَۃَ عند ہم اَیضًا اِلٰی وجود نَصٍّ-فَاِنَّ کَثِیرًا مِن ضَرُورِیَاتِ الدِّین مِمَّا لَا نَصَّ عَلَیہِ کَمَا یَظہَرُبِمُرَاجَعَۃِ ”الاعلام”وغیرہ)
(المعتمد المستند ص195- المجمع الاسلامی مبارک پور)

توضیح: (تحقیق المقام ان اکثر الحنفیۃ یکفرون بانکارکل مقطوع بہ)سے ثابت ہے کہ اکثر فقہائے احناف ہر قطعی کے انکار پر حکم کفر جاری کرتے ہیں۔

قطعی کی دوقسم ہے:قطعی بالمعنی الاخص اور قطعی بالمعنی الاعم۔قطعی بالمعنی الاخص ضروریات دین ہیں اور قطعی بالمعنی الاعم ضروریات اہل سنت۔

فقہائے کرام اکبر ظن کو بھی قطعی بالمعنی الاعم کہتے ہیں۔وہ قطعی ملحق ہے۔
وہ متکلمین کے یہاں ظنی ہے۔

وہ اجماعی امر جومتکلمین کے یہاں قطعی بالمعنی الاعم ہو،وہ ضروریات اہل سنت میں سے ہے۔اس کے انکار پر فقہائے احناف حکم کفر جاری کرتے ہیں۔

۔(3)قال العلامۃ البدایونی:(وَاَمَّا مَا ثَبَتَ قَطعًا-وَلَم یَبلُغ حَدَّ الضَّرُورۃِ-کاستحقاق بنت الابن السدس مع البنت الصلبیۃ باجماع المسلمین-فظاہرکلام الحنفیۃ الاکفار بجحدہ-فانہم لَم یَشتَرِطُوا فی الاکفارسوی القطع فی الثبوت-لا بُلُوغ العلم بہ حَدَّ الضَّرورۃ-ویجب حملہ ما اذا عَلِمَ المُنکِرُثُبُوتَہٗ قَطعًا-لِاَنَّ مَنَاطَ التَّکفِیرِ-

وہو التکذیب او الاستخفاف بالدین-اِنَّمَا یَکُونُ عِندَ ذلک-اَمَّا اِذَا لَم یَعلَم،فَلَا-اِلَّا اَن یَذکُرَ لَہٗ اَہلُ العِلمِ ذلک-اَی اَنَّ ذٰلِکَ الاَمرَ مِنَ الدِّینِ قَطعًا-فَیَتَمَادّٰی فِیمَا ہُوَ فِیہِ عِنَادًا-فَیُحکَمُ فِی ہٰذَا الحَالِ بِکُفرِہ لِظُہُورِ التَّکذِیبِ) (المعتقدالمنتقد ص212-المجمع الاسلامی مبار ک پور)

توضیح: (ویجب حملہ علی ما اذا علم المنکرثبوتہ قطعا)سے ثابت ہے کہ منکر کوضروریات اہل سنت کی قطعیت کا علم ہو۔

(فانہم لم یشترطوا فی الاکفارسوی القطع فی الثبوت)سے ثابت ہے کہ فقہائے احناف ہرقطعی کے انکار پر حکم کفر نافذکرتے ہیں۔

۔(4)قال الامام احمد رضا القادری:(اقول وحق التحقیق ما اَشَرنَا اِلَیہِ مرارًا من الفرق بین الکفر والاکفار-فالکفریتحقق عند اللّٰہ تَعَالٰی بتحقیق التکذیب او الاستخفاف-ولا یشترط معہ ثبوت اصلًا-فضلاً عن القطع-فضلًاعن الضرورۃ-والاکفار لا یَجُوزُ اِلَّا اِذَا تَحَقَّقَ لَنَا قَطعًا اَنَّہ مُکَذِّبٌ اَو مُستَخِفٌّ-وَلَا قَطعَ اِلَّا فی الضروریات-لِاَنَّ فی غیرہا-لَہٗ اَن یَقُولَ:لَم یَثبُت عِندِی-اَمَّا اِذَا اَقَرَّ بالثبوت ثم جحد-فقد عُلِمَ التَّکذیب- وَلَا وَجہَ حِینَئذ لِلتَّوَقُّف فی الاکفار لِحُصُولِ العِلمِ بوجود المدار-فَالحَقُّ مع الحنفیۃ علٰی ہذا الوجہ الذی قَرَّرنَا-فاحفظ فانہ مُہِمٌّ)
(المعتمد المستندص212-المجمع الاسلامی مبارک پور)

توضیح:(اما اذا اقربالثبوت ثم جحد)سے ثابت ہے کہ منکر کوضروریات اہل سنت کی قطعیت کا علم ہو۔

منقولہ بالااقتباس میں امام احمدرضا قادری قدس سرہ العزیزنے فقہائے احناف کے مذہب کی خوبی بیان فرمائی، لیکن وہ باب تکفیر میں متکلمین کے مذہب پر ہیں۔فقہا کے مذہب پر نہیں۔کسی امر کی خوبی بیان کرنا الگ امر ہے، اور اسے اختیارکرنا الگ امرہے۔

۔(5)قال الشامی:(ولذا ذکر فی المسایرۃ-اَنَّ مَا ینفی الاستسلام او یوجب التکذیب فہوکُفرٌ-فما ینفی الاستسلام،کُلُّ مَا قَدَّمنَاہُ عَن الحنفیۃ -اَی مِمَّا یدل علی الاستخفاف وما ذکر قبلہ من قتل نبی-اذ الاستخفاف فیہ اظہر-وما یوجب التکذیب جَحدُ کُلِّ مَا ثَبَتَ عن النبی صلی اللّٰہ علیہ وسلم اِدِّعَاءَہ ضرورۃً-واما ما لم یبلغ حد الضرورۃ کاستحقاق بنت الابن السدس مع البنت باجماع المسلمین فظاہر کلام الحنفیۃ الاکفار بجحدہ-فانہم لم یشرطوا سوی القطع فی الثبوت-ویجب حملہ علٰی ما اذا عَلِمَ المنکر ثبوتہ قَطعًا-لان مناط التکفیر وہو التکذیب اوالاستخفاف عند ذلک یکون-اما اذا لم یعلم فلا-الا ان یذکر لہ اہل العلم ذلک فیلج-الخ) (ردالمحتار جلد چہارم:ص407-دارالفکر بیروت)

توضیح: (ویجب حملہ علی ما اذا علم المنکرثبوتہ قطعا)سے ثابت ہے کہ منکر کوضروریات اہل سنت کی قطعیت کا علم ہو۔

(فانہم لم یشرطوا سوی القطع فی الثبوت)سے ثابت ہے کہ فقہائے احناف ہرقطعی کے انکار پر حکم کفر نافذکرتے ہیں۔

ضروریات اہل سنت کی قطعیت کا علم ہوجانے کے بعد تاویل کے ساتھ اس کا انکار فقہائے احناف اور ان کے مؤیدین یہاں کفر فقہی ہے۔اگرضروریات اہل سنت کے علم قطعی کے بعد ضروریات اہل سنت کا بلا تاویل انکار کرے تو یہ استخفاف بالدین اورکفرعنادی ہے۔ اس صورت میں فقہا ومتکلمین سب کے یہاں حکم کفر عائد ہوگا۔

کسی نے لاعلمی کے سبب ضروریات اہل سنت کا انکار کیا توحکم کفر جاری نہیں ہوگا۔

۔(6)قال الحصکفی:(والکفرلغۃً-اَلتَّسَتُّرُ-وَشَرعًا-تکذیبہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم فی شیء مما جاء بہ من الدین ضرورۃ) (الدرالمختارجلد چہارم:ص407)

۔(7)قال الشامی فی شرح قول الحصکفی:(وظاہر کلامہ تخصیص الکفر بجحد الضروری فقط-مَعَ اَنَّ الشرط عندنا ثبوتہ علٰی وجہ القطع -وان لم یکن ضروریًّا-بل قد یکون استخفافًا من قول او فِعلٍ کَمَا مَرَّ)
(ردالمحتار جلد چہارم:ص407-دارالفکر بیروت)

توضیح:(مع ان الشرط عند نا ثبوتہ علی وجہ القطع -وان لم یکن ضروریا)سے ثابت ہے کہ فقہائے احناف ہرقطعی کے انکار پر حکم کفر نافذکرتے ہیں۔

فقہائے احناف اور ان کے مؤیدین ہر قطعی امر کے انکارپر حکم کفر جاری کرتے ہیں، خواہ وہ ضروریات دین میں سے ہو،یا ضروریات اہل سنت میں سے۔

کسی نے لاعلمی کے سبب ضروریات اہل سنت کا انکار کیا توحکم کفر جاری نہیں ہوگا۔
ضروریات اہل سنت کی قطعیت کاعلم ہونے کے باوجود تاویل فاسد کے سبب ضروریات اہل سنت کاانکار کرے توفقہائے احناف کفرفقہی کا حکم نافذکرتے ہیں۔

ضروریات اہل سنت کی قطعیت کاعلم ہونے کے باوجود بلاتاویل ضروریات اہل سنت کاانکار کرے تویہ استخفاف بالدین ہے۔اس صورت میں متکلمین بھی حکم کفر نافذکرتے ہیں۔یہ کفر کلامی ہے۔

فقہائے کرام کے یہاں جو ظنی ملحق بالقطعی ہے، یعنی قطعی کی قسم سوم، اس کے انکار پر فقہائے احناف حکم کفر جاری نہیں کرتے۔ان شاء اللہ تعالیٰ تفصیل مرقوم ہو گی۔

تحریر: طارق انور مصباحی

مدیر: ماہنامہ پیغام شریعت، دہلی

اعزازی مدیر: افکار رضا

چند علمی سوالات و جوابات

 اخلاق حسنہ کے متعلق چالیس حدیثیں

 اپنے دلوں کو عشق مصطفوی سے روشن کریں

 ناموس رسالت ﷺ کا تحفظ لازم ہے

ہمارے لیے آئیڈیل کون ہیں ؟ 

تحفظ ناموس  رسالت ﷺ مسلمانوں کی اولین ذمہ داری 

تحفظ ناموس رسالت ﷺ میں اعلیٰ حضرت کے نمایاں کارنامے

شان رسالت  ﷺ میں گستاخی ناقابل معافی 

ہندی میں مضامین کے لیے کلک کریں 

हिन्दी में पढ़ने क्लिक करें 

غیر مقلد وہابیہ اور کفر کلامی

 گمراہ کافرفقہی وکافر کلامی کی نمازجنازہ

 مسئلہ تکفیر کس کے لیے تحقیقی ہے

فقہی اختلاف کے حدود و آداب

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Scroll to Top